عصر حاضر کی ایک عظیم ہستی


بسم اللہ الرحمن الرحیم

الحمد للہ عصر حاضر کی ایک عظیم ہستی جو ہمارے درمیان موجود ہے
جو صاحب شریعت بھی ہیں اور صاحب طریقت بھی
جو صاحب عرفان بھی ہیں اور عالم تنہایؑ کے ماہر اسرار بھی
جو واقف قطب عالم روحانی بھی ہیں اور واقف اسرا نہانی بھی
جو زاکر ذات سُبحانی بھی ہیں اور مالک ارشادات لطیف بھی
جو مفکر و دانشور بھی ہیں اور عظیم شاعر بھی
وہ ہیں محترم جناب استاد الاستاد محمد شفیع الرحمٰن شفیع صاحب


ان کا کلام ایسا بھی ہے جو فارسی اور عربی میں ہے جس کے سمجھنے کے لےؑ کبھی کبھی جتن بھی کرنے پڑ جاتے ہیں بہر حال یہاں ان کے اردو کلام سے چند اشعار آپ سب کی بصارتوں کی نظر کرنا چاہتا ہوں اور آپ خود فیصلہ کریں کہ ہم سب کتنے خوش قسمت ہیں کہ جن کے درمیان
جناب غالب ، جناب علامہ ڈاکٹر محمد اقبال صآحب رحمۃاللہ علیہ جیسی عطیم یستی موجود ہے،
آپ سب سے گزارش ہے کہ ان کے لےؑ کم از کم دعا ضرور فرمایؑں ، اللہ پاک ان کی صحت ، عظمت اور عمر میں بہت ساری برکتیں عطا فرمایؑں اور ان کی عظمتوں کا صدقہ ہم سب کے سینے بھی روشن فرمایؑں
آمین یا رب العالمین

تماشا ہی سہی ! جب جب مداری مرکے دکھلاےؑ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کسی کی موت ہوتی ہے سبھی کے دل بہلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوادث نت نےؑ انداز سے تمبیہ کر جاتے ۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر ہم ٹھوکریں کھا کر نہیں کیوں خود سمبھلتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قیامت خیز شورش ، خون ، قتل و رہزنی ، توبہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شفیع اخبار پڑھتے بھی ہمارے دل دہلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سیاست داں ہمیں بے آب ماہی سی بنا دیتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر خسشہ کویؑ ہو ، پھر تو انگاروں پہ تلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔

ہم تو کرنے اور ہی کچھ آےؑ تھے اس دہر میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہو گےؑ برباد وحشت اور اس کے قہر میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ کو دل دے خدا ، مجھ کو پسندیدہ زباں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دونوں پھر انمول ہو جایؑں گے اپنی قدر میں ۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم گلہ کرتے ہی کیوں خود اپنے ہی احباب سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کرتے استقبال جن کا تحفہؑ خوں ناب سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اجنبی دو ایک ہوتے ہیں رضامندی سے بس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہو قبول اک معتبر تو دوسرے ایجاب سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اہل دل ہوتے تو خود کرتے نہیں کویؑ جفا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کاش! لیتے درس وہ دل لش وفا کے باب سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس جہاں میں دور خوباں سے رہے ہم اس لےؑ ۔۔۔۔۔۔۔۔
آخرت میں ہوں کواعب سامنے اَتراب سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہے گلوں سے ، باغباں ، آباد اب تک چمن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان کو غارت مت کرو ، بے درد تم ، اِتراب سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پیڑ پر سب کے خوش رنگ ہیں آم اب ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم ببول اپنے گھر میں اگاتے رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خون پی کر غریبوں کے موٹے ہوےؑ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انجمن جو رفاہی چلاتے رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عبادت کے لےؑ آسودگی تن کی ضروری ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تلاوت ہو نہ فاقہ ہو ، نہیں منہ سے بھجن نکلے ۔۔۔۔۔۔۔۔
کرے جب داد کی فریاد شاعر خود گدابن کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو مفلس سامعین کے دم سے روحِ انجمن نکلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مکارم کی لطافت ، دل نشینی ، نزہت و رونق ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر کردار میں آیؑں تو سب کے دیں ! سجن نکلے ۔۔۔۔۔۔

محبت کر خدا سے بس ، اسی نے دل بھی بخشا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہی ہے بہتریں دل دار جگ کے بے شماروں سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رفاقت فیس بک پر ہوتی ہے اغیار سے اکثر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر سچ ہے کہ ہوتے دور پھر اپنے ہزاروں سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حقیقت کی طلب سچ مچ اگر ہو آپ کے دل میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بسا اوقات ملتے رہیؑے افسانہ نگاروں سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلندی سے ڈرا کرتے ، مگر ارمان دل میں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دل بہلاتے رہتے ہیں پتنگوں سے ، غباروں سے ۔۔۔۔۔۔۔

عبادت کے لےؑ آسودگی تن کی ضروری ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تلاوت ہو نہ فاقہ ہو ، نہیں منہ سے بھجن نکلے ۔۔۔۔۔۔۔۔
کرے جب داد کی فریاد شاعر خود گدابن کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو مفلس سامعین کے دم سے روحِ انجمن نکلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مکارم کی لطافت ، دل نشینی ، نزہت و رونق ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر کردار میں آیؑں تو سب کے دیں ! سجن نکلے ۔۔۔۔۔۔

…………………..

 

 

Poetry

 

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s

%d bloggers like this: