” یہ جانتے بھی سب کہاں ہیں “


عقیدت

جانتے ہیں سبھی آتے ہوےؑ رونے کو یہاں

لیکن جاتے ہوےؑ یاں سے روتے بھی سب کہاں ہیں

روتی ہے دنیا اپنی عاقبت کے واسطے جہاں میں

روےؑ کہ نبی رونے ، دکھ سے روتے بھی سب کہاں ہیں

جنت دونگا اسے یہ رب کا وعدہ ہے مگر ناداں

شہادت کو قتل کہنا کیسا ، یہ جانتے بھی سب کہاں ہیں

ہو گزرے گی کہیں جب بھی وفا و تکمیل کی بات

یاد شبیر کو کرے گا زمانہ پر یہ جانتے بھی سب کہاں ہیں

***MAZHAR IQBAL GONDAL***

06/10/2016

janty-bhi-sab-kahan-hen

 

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: