ووٹ کے طلبگار

ووٹ کے طلبگار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انہیں آخرت سے کیا سروکار ہے

حرص و ہوس سے جو سرشار ہیں

بھڑکانا عام آدمی کو ہیں جانتے

ہمارے دل اس سے کتنے بیزار ہیں

کتنا کچھ ہوا ان کے ساتھ لیکن

معلوم نہیں ان کو کیسے خمار ہیں

اڑایؑں مال اور عدل سے باغی ہیں

خود فریبی میں اب جو گرفتار ہیں

ماری گیؑ مت سنتے ہیں پر بولتے نہیں

خبیس پھر جن سے ووٹ کے طلبگار ہیں

 

Poetry

 

 

 

Leave a Reply