ترے یار بہت ہیں

ترے یار بہت ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گزارا کبھی نہ ہوا جس کے بنا تمہارا

حالانکہ بات سچ ہے کے ترے یار بہت ہیں

 

چھٹکارا پا سکو نہ کبھی جو اداسی سے تم

سوچتے رہو عمر ساری ترے یار بہت ہیں

گرتے ہو جو تو خود ہی سمبھلتے بھی رہو تم

پکڑے گا نہ ہاتھ کویؑ تمہارا کے ترے یار بہت ہیں

 

Poetry

 

 

 

 

One thought on “ترے یار بہت ہیں

Leave a Reply