” آفتاب “

 
 
 
 
نیند سے ہوگیؑ دشمنی جب سے
 
دوست سب ظرف آفتاب ہوگےؑ
 
 
ڈوبنا یادوں میں سیکھا ہے جب سے
 
ستارے سب تسخیر آفتاب ہوگےؑ
 
 
پتھرا سی گیؑں آنکھیں انتظار میں جب سے
 
سہارے سب فرزند آفتاب ہوگےؑ
 
 
دیکھ لی دوستی شعروں سے ہماری جب سے
 
پیارے سب تغیر آفتاب ہو گےؑ
Poetry

 

Leave a Reply